24 اپریل 2019
تازہ ترین
سپین کے لوگوں کی مکمل نقل مکانی پر تحقیق

سپین کے لوگوں کی مکمل نقل مکانی پر تحقیق

سپین تقریباً ہزاروں سال پرانا ملک ہے اور اسکی تاریخ کے ابتدائی ابواب کانسی کے عہد سے تعلق رکھتے ہیں۔ ماہرین ارتقائے انسانی کی ایک ٹیم نے برسوں کی تحقیق و مشاہدے کے بعد یہ انکشاف کیا ہے کہ ایک وقت ایسا بھی تھا جب سپین کی پوری آبادی نقل مکانی کر گئی تھی۔ ان ماہرین کے بیان کے مطابق روس سے بڑے پیمانے پر ہونے والی نقل مکانی کے نتیجے میں آبنائے آئبیریا تشکیل پایا تھا اور یہ زمانہ تاریخ میں کانسی کے عہد کے نام سے جانا جاتا ہے۔ سپین کے مختلف علاقوں بالخصوص سرحدی علاقوں کے غاروں وغیرہ سے جو انسانی ڈھانچوں کی باقیات ملی ہیں، انکا ڈی این اے کرانے کے بعد سائنسدان اس نتیجے پر پہنچے ہیں کہ سپین کی مرد آبادی تقریباً مکمل طور پر اب سے 4سے ساڑھے 4ہزار سال کے دوران رزق کی تلاش میں نقل مکانی کرکے ادھر ادھر نکل گئی تھی اور نقل مکانی کا یہ سلسلہ صدیوں پر محیط تھا۔ ماہرین نے یہ انکشاف کرتے ہوئے ایک حیرت انگیز بات یہ بھی بتائی کہ مرد تو سب کے سب چلے گئے تھے مگر خواتین یہیں مقیم رہیں۔ اور اپنے مردوں کا انتظار کرتی رہیں۔ جینیاتی تجزیے سے یہ بات بھی سامنے آئی ہے کہ آئبیرین آبنائے کے علاقے بالخصوص سپین اور پرتگال بہت بڑی نقل مکانی سے دوچار ہوئے تھے۔ جن انسانی باقیات یا ڈی این اے اس رپورٹ کا حصہ بنی ہے وہ ڈھانچے 8ہزار سال پرانے تھے۔ عصری ہسپانوی خواتین کا ڈی این اے بھی یہی بتاتا ہے کہ ایسی ڈرامائی ہمہ گیر نسلی تبدیلی کے باوجود عورتوں کی جین 99.9فیصد جوں کی توں رہی۔


مزید خبریں

عوامی سروے

سوال: کیا پی ٹی آئی انتخابات سے قبل کیے گئے وعدے پورے کر پائے گی؟