20 اگست 2019
تازہ ترین
سوئمنگ سے بلڈ پریشر کا علاج ممکن

سوئمنگ سے بلڈ پریشر کا علاج ممکن

اکثر لوگ تیراکی پسند کرتے ہیں۔ تحقیق سے یہ بات ثابت ہو چکی ہے کہ تیراکی سے بلڈپریشر کو کم کرنے میں مدد ملتی ہے۔ رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ 34 مردوں اور عورتوں میں جنہوں نے ہفتے میں کچھ دن سوئمنگ کرنا شروع کی، ان کے systolic B.P. یعنی اوپر کے بلڈپریشر میں کمی آئی ہے۔ مجموعی طور پر جن لوگوں کا اوپر کا بلڈپریشر 131 رہتا تھا ۔ 3مہینے بعد 122mm Hgپر آگیا ۔ 120/80 نارمل بلڈ پریشر کہلاتا ہے۔ جبکہ 140/90 یا اس سے اوپر ہائی بلڈ پریشر کہلاتا ہے۔ بوڑھے لوگوں کے لئے تیراکی ورزش کا آسان طریقہ ہے کیونکہ اس سے جوڑوں پر زیادہ زور نہیں پڑتا اور نہ ہی جسم کا درجہ حرارت بڑھتا ہے۔ یہ بات بھی کہنا غلط نہ ہوگی کہ بوڑھوں کے لئے واکنگ کے بعد سوئمنگ ہی سب سے مقبول ورزش ہے۔ سوئمنگ کے فائدہ مند ہونے کے ساتھ یہ بات بھی واضح ہو جاتی ہے کہ واک اور بائی سائکلنگ کی طرح سوئمنگ بھی بوڑھے لوگوں کے لئے ورزش کا محفوظ طریقہ ہے۔ سوئمنگ خون کی نالیوں کی کاکردگی کو بہتر بناتی ہے، خون کے دبائو کو کم کرتی ہے۔ سوئمنگ ورزش کا دلچسپ طریقہ ہے۔ یہ آسان ہونے کے ساتھ سستا بھی ہے۔ اس کے علاوہ پانی میں بھاری وزن بھی آسانی کہ ساتھ حرکت کر سکتا ہے۔ جس کی وجہ سے گھٹنوں اور ٹخنوں کے جوڑوں پر زور نہیں پڑتا۔ سوئمنگ نہ صرف بلڈپریشر کو کم کرتی ہے بلکہ دوسری ورزشوں کے مقابلے میں جسم کے جوڑوں پر زیادہ زور نہیں ڈالتی۔ یہی وجہ ہے سوئمنگ کو ورزش کے طور پر کرنے کا مشورہ ان لوگوں کو دیا جاتا ہے جو کسی طرح کی چوٹ سے صحیح ہونے کے بعد ورزش کرتے ہیں۔ سوئمنگ نا صرف بلڈ پریشر کے لئے بہترین ہے بلکہ دل کو صحت مند رکھنے کے لئے بھی مفید ہے۔ یہی وجہ ہے کہ تیراک سب سے زیادہ صحت مند کھلاڑی ہوتے ہیں۔ سوئمنگ کے لاتعداد فوائد ہیں۔ یہ پورے جسم کی ورزش ہے۔ اگر صحیح طرح کی جائے تو یہ ورزش کا نہایت محفوظ طریقہ ہے۔ یہی وجہ ہے کہ بوڑھے لوگوں کے لئے آسان اور فائدہ مند ورزش سوئمنگ ہے۔ جو انہیں ہر طرح صحت مند رکھ سکتی ہے۔


مزید خبریں

عوامی سروے

سوال: کیا پی ٹی آئی انتخابات سے قبل کیے گئے وعدے پورے کر پائے گی؟