24 مئی 2019
تازہ ترین
دنیا کے سب سے بڑے اور طاقتور انجن والے طیارے کی پہلی کامیاب پرواز

دنیا کے سب سے بڑے اور طاقتور انجن والے طیارے کی پہلی کامیاب پرواز

دنیا کے سب سے بڑے طیارے اسٹریٹو لانچ نے اپنی پہلی تجرباتی پرواز کامیابی سے مکمل کر لی۔ بین الاقوامی خبر رساں ادارے کے مطابق امریکا میں بوئنگ طیارے کے 6 انجن جتنی طاقت رکھنے والے دنیا کے سب سے بڑے طیارے اسٹریٹو لانچ جس کے دو پروں کے درمیان فاصلہ ایک فٹ بال گراؤنڈ کے برابر ہے نے پہلی مرتبہ پرواز کی، جہاز کو آسمان میں دس کلومیٹر کی بلندی پر اڑایا گیا۔ یہ طیارہ بھاری بھرکم سٹیلائٹ کو لے جانے اور خلائ میں چھوڑنے کی حیران کن صلاحیت سے مالا مال ہے۔ اسٹریٹو لانچ کا منصوبہ مائیکرو سافٹ کے شریک بانی پال ایلن نے 2011  میں شروع کیا تھا اور اِس منصوبے کو آگے بڑھانے میں مشہور ایئرواسپیس کمپنی  اسکیلڈ کمپوزٹس  کے علاوہ ایلون مسک کی اسپیس ایکس کی تکنیکی معاونت بھی حاصل ہے۔ گزشتہ برس اس طیارے کو پرو ٹو ٹائپ کیلیفورنیا کے موہاوی صحرا میں بنے ایک وسیع ہینگر سے پہلی مرتبہ باہر لایا گیا تھا۔ اسٹریٹو لانچ کو بطور خاص سیارچہ بردار راکٹوں کو انتہائی بلندی پر پہنچا کر خلا کی سمت چھوڑنے کے لیے تیار کیا گیا ہے جس سے خلائی سفر کے اخراجات بہت کم کیے جا سکیں گے۔ ناسا نے اس ایجاد کو خلائی ریسرچ کے لیے اہم کامیابی قرار دیا ہے جس سے سفری اخراجات نہایت کم ہوجائیں گے۔ واضح رہے کہ اسٹریٹو لانچ کے بازوں کا پھیلائو 385  فٹ اور اونچائی 50 فٹ ہے جبکہ اس میں 28 دیوقامت پہیے ٟ لگے ہیں اور ہر پہیہ کسی ٹرک جتنی جسامت کا ہے۔ علاوہ ازیں اس میں بوئنگ 747 مسافر بردار طیارے میں نصب ہونے والے 6 عدد طاقتور جیٹ انجن بھی لگائے گئے ہیں جو مجموعی طور پر 500,000 پونڈ سے بھی زیادہ پے لوڈ کو ہزاروں فٹ کی بلندی تک پہنچانے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔


مزید خبریں

عوامی سروے

سوال: کیا پی ٹی آئی انتخابات سے قبل کیے گئے وعدے پورے کر پائے گی؟