29 ستمبر 2020
تازہ ترین
  داعش نے ہزاروں عراقی شہریوں کی شناختی دستاویزات بدل دیں  

  داعش نے ہزاروں عراقی شہریوں کی شناختی دستاویزات بدل دیں  

عراق میں ہزاروں شہریوں نے موصل میں داعش کے چنگل سے تو آزادی حاصل کر لی مگر ان افراد کو اپنے ذاتی دستاویزات کی تصدیق کے حوالے سے شدید مشکلات کا سامنا ہے۔ بالخصوص نکاح ناموں اور پیدائش کے سرٹیفکیٹ سے متعلق جو داعش تنظیم کی جانب سے جاری کئے گئے۔ اس کے نتیجے میں  عراقیوں کی ایک بڑی تعداد موصل کے قریب الخازر کیمپ میں قائم عبوری عدالت کے باہر انتظار کرتے ہوئے نظر آتی ہے ، یہ افراد ہاتھوں میں داعش کی جانب سے جاری دستاویزات تھامے ہوتے ہیں تاکہ ان کو تبدیل کرایا جا سکے۔میڈیارپورٹس کے مطابق سب زیادہ پیچیدہ معاملہ اْن عراقی خواتین کا ہے جو موصل میں داعش کی انتظامیہ کے تحت رشتہ ازدواج میں منسلک ہوئیں اور ان کے یہاں بچوں کی پیدائش بھی ہو گئی۔ عراقی حکام کے نزدیک ایسی عراقی خواتین ابھی تک کنواری ہیں اور ان کے بچوں کا بھی کوئی وجود نہیں اس لیے کہ حکام داعش کی جانب سے ان خواتین کو جاری نکاح نامے اور بچوں کی پیدائش کے سرٹیفکیٹ کو تسلیم نہیں کر رہے ہیں۔ عراقی حکام اس وقت داعش کی بیورو کریسی ورثے کے خاتمے کے لیے کام کر رہے ہیں تاہم ان کوششوں کو دشواریوں کا سامنا ہے۔ لڑائی کے بعد جن لوگوں نے نقل مکانی کی ان میں اکثریت کے پاس شناختی کارڈ نہیں ہیں ۔


مزید خبریں

عوامی سروے

سوال: کیا آپ کووڈ 19 کے حوالے سے حکومتی اقدامات سے مطمئن ہیں؟