بھنے آلو کینسر کا موجب


 برطانیہ کے ماہرین نے تحقیق سے دریافت کیا ہے کہ اگر ڈبل روٹی کے توس اور آلو اس حد تک پکائے یا سینکے جائیں کہ ان کی رنگت بھوری (براؤن) ہو جائے تو ان میں ایکرائل امائیڈ نامی ایک مرکب کی مقدار بڑھ جاتی ہے جو کینسر کی وجہ بن سکتا ہے۔ البتہ اگر انہیں صرف اس حد تک سینکا یا پکایا جائے کہ وہ سنہری مائل رنگت کے رہیں تو اس سے ایکرائل امائیڈ زیادہ مقدار میں نہیں بنتا اور انہیں کھانا بھی صحت کےلئے محفوظ رہتا ہے۔ آلوؤں کے علاوہ پودوں کی جڑوں میں اُگنے والی دوسری نشاستہ دار سبزیوں کے بارے میں بھی ماہرین کا یہی مشورہ ہے کہ انہیں بہت زیادہ نہ پکایا جائے ورنہ ان میں بھی ایکرائل امائیڈ کی مقدار ضرورت سے بڑھ جائے گی۔ چپس، کیک، کوکیز، سیریلز اور کافی میں بھی ایکرائل امائیڈ کی زیادہ مقدار موجود ہوتی ہے یعنی ان کے استعمال میں بھی احتیاط برتنی چاہئے اور انہیں روزمرہ غذائی معمولات کا حصہ نہیں بنانا چاہئے۔


عوامی سروے

سوال: کیا پی ٹی آئی انتخابات سے قبل کیے گئے وعدے پورے کر پائے گی؟