بھارت میں ہندو انتہا پسند تنظیموں نے"اے دل ہے مشکل" کی مشروط ریلیز کی اجازت دے دی

بھارتی میڈیا رپورٹس کے مطابق فلم “اے دل ہے مشکل” کی ریلیزکے لیے پروڈیوسرکرن جوہر، ہدایتکارمکیش بھٹ اور ہندو انتہا پسند تنظیم مہاراشٹر نونرمان سینا کے سربراہ راج ٹھا کرے کی مہاراشٹرا کے وزیراعلی سے ملاقات ہوئی. ملاقات میں آئندہ پاکستانی اداکاروں کے ساتھ کام نہ کرنے کی یقین دہانی کے بعد پاکستانی فنکار فواد خان کی فلم “اے دل ہے مشکل” کی مشروط ریلیزکی اجازت دے دی گئی جب کہ کرن جوہر نے’’اے دل ہے مشکل‘‘ کے آغاز پر اڑی واقعے میں ہلاک ہونے والے اہلکاروں کے لیے خراج عقیدت کی سلیٹ لگانے کی پیشکش کردی ہے۔دوسری جانب میڈیا سے گفتگوکرتے ہوئے ہدایتکارمکیش بھٹ کا کہنا تھا کہ بھارتی فلم پروڈیوسرزگلڈ نے بھی پاکستانی اداکاروں کے ساتھ فلمیں نہ کرنے کا فیصلہ کرلیا ہے جس کے بعد فلم “اے دل ہے مشکل” کی ریلیز کی اجازت ملی ہے اوراے دل ہے مشکل‘‘ 28 اکتوبرکو ریلیز ہوگی۔واضح رہے کہ کرن جوہرکی فلم ’’اے دل ہے مشکل‘‘ 2 برس کے طویل عرصے میں مکمل ہوئی ہے اوراسے دنیا بھر میں 28 اکتوبرکو ریلیز کیا جانا ہے تاہم اڑی واقعے کے بعد اس فلم میں پاکستانی فنکار فواد خان کے باعث شدید تنقید کا نشانہ بنایا جارہا ہے۔


عوامی سروے

سوال: کیا پی ٹی آئی انتخابات سے قبل کیے گئے وعدے پورے کر پائے گی؟