09 اپریل 2020
تازہ ترین
بش ، اوباما کی پالیسی نہ اپنائیں ، افغان طالبان کا ٹرمپ کو پیغام

بش ، اوباما کی پالیسی نہ اپنائیں ، افغان طالبان کا ٹرمپ کو پیغام

 افغان طالبان نے نو منتخب امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے نام پیغام جاری کرتے ہوئے انہیں خبردار کیا ہے کہ وہ سابق صدر جارج بش اور اوباما کی پالیسی اپنانے سے گریز کریں۔ افغان خبر رساں ادارے خامہ پریس کی رپورٹ کے مطابق ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے عہدہ صدارت کا حلف اٹھانے کے بعد طالبان نے ان کے نام پیغام جاری کیا۔ اپنے پیغام میں طالبان نے کہا کہ اگر ٹرمپ بھی سابق امریکی صدور براک اوباما اور جارج بش کی پالیسی پر عمل پیرا رہیں گے تو افغانستان میں تشدد کا سلسلہ جاری رہے گا۔ طالبان کی جانب سے یہ دعویٰ بھی کیا گیا کہ گزشتہ 16 برس سے جاری افغانستان میں امریکی سربراہی میں اتحادی افواج کی مداخلت کی وجہ سے تباہی، انسانی جانوں کا ضیاع اور اربوں ڈالرز کا نقصان ہوا۔ طالبان نے یہ بھی کہا کہ امریکی مداخلت اور طاقت کے استعمال سے افغانستان کے لوگوں میں امریکہ کا منفی تاثر قائم ہوا اور اس کے خلاف نفرت میں اضافہ ہوا۔ واضح رہے کہ ٹرمپ انتظامیہ نے تاحال افغانستان اور اس خطے کے حوالے سے اپنی پالیسی کا اعلان نہیں کیا ہے۔ 8 نومبر کو جب ڈونلڈ ٹرمپ امریکی صدارتی انتخاب میں کامیاب ہوئے تھے تو اس وقت بھی افغان طالبان کی جانب سے بیان جاری کیا گیا تھا جس میں ڈونلڈ ٹرمپ پر زور دیا گیا تھا کہ افغانستان میں جنگ کی ناکامی کے باعث امریکی فوج اور معیشت پر برے اثرات مرتب ہوئے ہیں اور ساتھ ہی مطالبہ کیا تھا کہ افغانستان سے امریکی فوج کو واپس بلا لیا جائے۔ حالانکہ افغانستان کی حکومت نئے امریکی صدر کے ساتھ مل کر کام کرنے کے لیے پر عزم ہے۔ گزشتہ روز ڈونلڈ ٹرمپ کو امریکی صدر کا عہدہ سنبھالنے پر مبارکباد دیتے ہوئے افغانستان کے چیف ایگزیکٹو عبداللہ نے کہا تھا کہ ہمیں امید ہے امریکہ افغان حکومت کی حمایت جاری رکھے گا۔ 


مزید خبریں

عوامی سروے

سوال: کیا پی ٹی آئی انتخابات سے قبل کیے گئے وعدے پورے کر پائے گی؟