بالوں کا جھڑنا کس چیز کی کمی کا ثبوت ؟

جب اچھے بھلے خوبصورت بال خزاں کے سوکھے پتوں کی طرح جھڑنے لگتے ہیں تو اکثر لوگوں کو مارے پریشانی کے سمجھ نہیں آتی کہ کیا کریں اور کدھر جائیں۔ ایسے میں کوئی خاص تیل سر میں رگڑتا ہے تو کوئی مہنگی گولیاں پھانکتا ہے، مگر ان بنیادی اسباب کی جانب کم ہی توجہ کی جاتی ہے جو بال گرنے کی اصل وجہ ہوتے ہیں۔ سائنسی ماہرین کہتے ہیں کہ بالوں کے گرنے کی دو اہم ترین وجوہات تھائیرائڈ ہارمون کی گربڑ اور آئرن کی کمی ہے، اور ان دو مسائل کو حل کر کے بالوں کے گرنے کا مسئلہ بھی حل کیا جا سکتا ہے۔ تھائیرائیڈ گردن کے سامنے والے حصے میں واقع ایک گلینڈ ہے جو تھائیرائیڈ ہارمون پیدا کرتا ہے۔ اس ہارمون کی کمی کی وجہ سے بال گرنے کا مسئلہ پید اہو جاتا ہے۔ اگر آپ کسی اچھے ماہر صحت سے مشورہ کریں تو وہ تھائیرائیڈ ہارمون میں کمی کا پتہ چلاسکتا ہے اوراس کمی کو پور اکرنے کے لئے ادویات یا سپلیمنٹ بھی تجویز کرسکتا ہے۔ آئرن کی کمی بال گرنے کی دوسری اہم وجہ ہے۔ آئرن کی کمی سے بچنے کے لئے آپ کو سرخ گوشت، ہرے پتوں والی سبزیاں خصوصاً پالک، اور اسی طرح مچھلی اور دالوں وغیرہ کا استعمال ضرور کرنا چاہیے۔ آئرن کی طرح ہی کچھ اور معدنیات بھی بالوں کی صحت کے لئے بہت ضروری ہیں۔ ان میں زنک، آئیوڈین اور سلینیم اہم ہیں۔ ان کا حصول غذا سے یا بصورت دیگر فوڈ سپلیمنٹ سے یقینی بنانا چاہیے۔ بال گرنے کی دیگر عمومی وجوہات میں سے ذہنی دبائو اور پریشانی بھی ایک اہم مسئلہ ہے۔ ذہنی دبائو سے بچنے کے لئے جہاں مثبت طرز فکر اور سرگرم طرز زندگی ضروری ہے وہیں باقاعدہ ورزش بھی فائدہ مند ثابت ہوسکتی ہے۔ اگر آپ کو ہاضمے کے مسائل کا سامنا ہے تو اس کا بالواسطہ تعلق بھی آپ کے بالوں کے ساتھ ہوسکتا ہے۔ بالوں کی صحت کے لئے ضروری ہے کہ آپ کا ہاضمہ درست طور پر کام کرے۔ لہٰذا مرغن غذائوں کا زیادہ استعمال نہیں کرنا چاہیے۔ کوشش کریں کہ سادہ اور زود ہضم غذائیں استعمال کریں۔ بالوں کی صحت کے لئے متوازن خوراک بنیادی اہمیت کی حامل ہے۔ اگرچہ عمومی طور پر آپ کی خوراک میں کاربوہائیڈریٹ نسبتاً کم اور پھل و سبزیاں زیادہ ہونی چاہئیں، لیکن اس بات کو بھی یقینی بنائیں کہ اچھی قسم کی چکنائی اور پروٹین بھی آپ کی غذا کا لازمی حصہ ہو۔ اسکے لئے ضروری ہے کہ آپ خشک میوہ جات، مرغی اور مچھلی کو اپنی غذا کا باقاعدہ حصہ بنائیں۔


عوامی سروے

سوال: کیا پی ٹی آئی انتخابات سے قبل کیے گئے وعدے پورے کر پائے گی؟