21 ستمبر 2019
تازہ ترین
آئی جی خیبرپختونخوا اور چیف سیکریٹری کو عہدے سے ہٹا دیا گیا

آئی جی خیبرپختونخوا اور چیف سیکریٹری کو عہدے سے ہٹا دیا گیا

 حکومت نے چیف سیکریٹری نوید کامران بلوچ اور آئی جی خیبر پختونخوا صلاح الدین محسود کو عہدے سے ہٹا دیا۔ خیبرپختونخوا میں گریڈ 21 کے محمد سلیم کو نیا چیف سیکریٹری تعینات کیا گیا ، جبکہ گریڈ 22 کے سابق چیف سیکریٹری نوید کامران بلوچ کو اسٹیبلشمنٹ ڈویذن رپورٹ کرنے کی ہدایت کی گئی۔ دوسری جانب وفاقی حکومت کی جانب سے آئی جی کے پی صلاح الدین محسود کو ہٹانے کے بعد پولیس سروس کے گریڈ 22 کے افسر محمد نعیم خان کو صوبے کی پولیس کا نیا سربراہ مقرر کیا گیا ۔ محمد نعیم خان آئی جی آزاد کشمیر کے طور پر ذمہ داریاں انجام دے رہے تھے تاہم اب ان کی جگہ پولیس سروس کے گریڈ 21 کے سابق آئی جی کے پی صلاح الدین محسود کو نیا آئی جی مقرر کیا گیا۔اسٹیبلشمنٹ ڈویږن نے ان تبادلوں اور تقریروں کا نوٹیفکیشن جاری کردیا ۔ ذرائع کے مطابق سیاسی حکومت لیویز اور پولیس کے مابین متوازی سسٹم لانا چاہتی ہے، چیف سیکریٹری اور آئی جی کے پی کی جانب سے سسٹم کی مخالفت کی گئی۔ ذرائع کے مطابق سابق چیف سیکریٹری اور آئی جی کے پی کا موقف تھا کہ لیویز اور پولیس کا متوازی سسٹم لانا سپریم کورٹ کے حکم کے خلاف ہے۔ ذرائع نے بتایا ہے کہ لیویز فورسز میں سیاسی بھرتیوں کے معاملے پر چیف سیکریٹری کے پی کو تبدیل کیا گیا ۔ اسی حوالے سے سابق آئی جی کے پی  صلاح الدین محسود نے کہا کہ انہوں نے  قبائلی اضلاع میں عارضی طور پر لیویز ایکٹ کی تجویز دی تھی، تجویز کا مقصد خاصہ داروں اور لیویز کی نوکری بچانا تھا، 6 ماہ بعد خاصہ دار اور لیویز پولیس کا حصہ بن جاتے۔


مزید خبریں

عوامی سروے

سوال: کیا پی ٹی آئی انتخابات سے قبل کیے گئے وعدے پورے کر پائے گی؟