23 ستمبر 2018
تازہ ترین
ایشیا کپ  کیلئےتربیتی کیمپ کا دوسرا مرحلہ شروع

ایشیا کپ کی تیاریوں کیلئے قومی ٹیم کے تربیتی کیمپ کا دوسرا مرحلہ آج سے قذافی سٹیڈیم میں شروع ہوگیا ہے، 10 ستمبر تک جاری رہنے والی مشقوں میں کھلاڑی بیٹنگ ، بائولنگ اور فیلڈنگ بہتر بنانے پر توجہ مرکوز رکھیں گے۔ تفصیلات کے مطابق ایشیا کپ کی تیاریوں کیلیے قومی کرکٹ ٹیم کے تربیتی کیمپ کا دوسرا مرحلہ آج سے قذافی سٹیڈیم لاہور میں شروع ہوگیا ہے، کیمپ میں شرکت کرنے والے کھلاڑیوں میں کپتان سرفراز احمد، شان مسعود، امام الحق، فخر زمان، محمد حفیظ، شعیب ملک، حارث سہیل، آصف علی،  بابر اعظم،  شاداب خان،  محمد نواز، عماد وسیم، حسن علی، عثمان خان  شنواری، محمد عامر، جنید خان، شاہین شاہ آفریدی اور فہیم اشرف شامل  ہیں، کیمپ 10 ستمبر تک جاری رہے گا۔ یاد رہے کہ ایشیا کپ 15ستمبر سے یو اے ای میں  شروع ہوگا، جس میں  شریک ٹیموں کو  2 گروپس میں تقسیم کیا گیا ہے، گروپ اے میں پاکستان ، بھارت اور ایک کوالیفائر ٹیم شامل ہوگی،  جبکہ گروپ بی میں  سری لنکا، بنگلہ دیش  اور افغانستان کو رکھا گیا ہے۔ پاکستانی ٹیم  اپنا پہلا میچ 16 ستمبر کو  گروپ اے کی کوالیفائر ٹیم کے ساتھ کھیلے گی  جبکہ پاکستان اور بھارت کی ٹیمیں19ستمبر کو ایک دوسرے کے خلاف ایکشن میں دکھائی دیں گی۔ دوسری جانب پاکستان کے ہیڈ کوچ مکی آرتھر پرامید ہیں کہ انہوں نے فیلڈنگ میں جو بہترین معیار قائم کیا ہے وہ آنے والے برسوں میں بھی قائم رہے گا۔ اپنے ایک انٹرویو میں انہوں نے کہا کہ میں نے اسٹیورکسن، گرانٹ فلاور اور اظہر محمود پر مشتمل کوچنگ اور سپورٹ سٹاف پاکستان کرکٹ پر انمٹ نقوش چھوڑے گا، اگر یہ معیار اگلے دو برس کے دوران برقرار رہتا ہے تو پھر مجھے یقین ہے کہ ہمارے نوجوان کھلاڑی اس کلچر کو کرکٹرز کے اگلی نسل میں منتقل کریں گے اور ان سے پھر آنے والی نسل میں یہ منتقل ہوتا چلا جائے گا۔ اس لئے میں پرامید ہوں کہ جب یہ کوچنگ گروپ یہاں پر موجود نہیں ہوگا اور لوگ ہمیں دوسری جگہوں پر دیکھیں گے تو کہیں گے کہ ان کے دور میں ہمارے فیلڈنگ کلچر میں انقلاب برپا ہوا اور ہم اسی کیلئے ہی کوشاں ہیں۔ مکی آرتھر پاکستان کرکٹ کی مجموعی سمت کے حوالے سے بھی کافی خوش اور اس بڑی تبدیلی کی وجہ ٹیم مینجمنٹ کی محنت کو قرار دیتے ہیں۔ وہ کہتے ہیں کہ اس وقت ہر چیز درست سمت میں گامزن ہے، میں پاکستان کرکٹ کو ہر شعبے میں بہترین دیکھنا چاہتا ہوں۔


عوامی سروے

سوال: کیا پی ٹی آئی انتخابات سے قبل کیے گئے وعدے پورے کر پائے گی؟