19 ستمبر 2018
انگور اور سیب پروسٹیٹ کینسر ختم کرنے میں مددگار

 یورپ و امریکی مردوں میں پروسٹیٹ کینسر ایک وبا کی صورت اختیار کرتا جارہا ہے اور خود پاکستان میں بھی اس کے کئی مریض موجود ہیں، تاہم اس موذی مرض کو تین عام غذائوں سے ختم کرنے میں مدد مل سکتی ہے۔ یونیورسٹی آف ٹیکساس کے ڈاکٹر سٹیفنو ٹیزیانی نے چوہوں پر ایک تحقیق کی اور انہیں ہلدی، سرخ انگور اور سیب کھلانے کا تجربہ کیا اور جب چوہوں کو یہ غذائیں دی گئیں، تو انہیں کھانے والے چوہوں میں پروسٹیٹ کینسر کے خلیات  تیزی سے ختم ہونے لگے جس پر ماہرین نے کہا کہ ہلدی، سرخ انگور اور سیب ایک ساتھ کھانے سے مرد حضرات اس جان لیوا بیماری سے دور رہ سکتے ہیں اور اس مرض میں مبتلا لوگ بھی ان غذائوں کی مدد سے بیماری سے چھٹکارا حاصل کر سکتے ہیں۔ سائنسدانوں نے پہلے نر چوہوں کو پروسٹیٹ کینسر کا مریض بنایا اور پھر ان کے سرطانی خلیات اور انسانوں کے سرطانی خلیات کو باہر نکال کر تینوں اجزا کو ان پر آزمایا تو وہ سرطانی رسولیوں کو تیزی سے تباہ کرنے لگے، یہاں تک کہ وہ اس وقت موجود دوا سے بھی زیادہ موثر ثابت ہوئے ہیں جب انہیں براہ راست چوہوں کو کھلایا گیا تو ان کے پروسٹیٹ سرطانی ٹیومر سکڑنے لگے اور مزید سرطانی خلیات بننا بھی بند ہوگئے۔ تحقیق کرنے والے ماہرین نے کہا کہ یہ غذائیں پروسٹیٹ سرطانی رسولیوں کو کسی سائیڈ ایفیکٹ کے بغیر ختم کرنے میں مدد فراہم کر رہی ہیں۔ ان دو پھلوں اور ایک مصالحے میں ایسے قدرتی اجزا پائے جاتے ہیں جو پروسٹیٹ کینسر کو روکتے ہیں، پہلا جزو تو بہت مشہور ہے جو ہلدی میں عام پایا جاتا ہے اور اسے سر کیومن کہتے ہیں دوسرا جزو سیب کے چھلکے میں ہوتا ہے جسے ارسولک ایسڈ کہا جاتا ہے، جبکہ انگور میں پایا جانے والا تیسر اہم جزو ریزوریٹرول ہے جو بعض بیریوں میں بھی موجود ہوتا ہے اور یہ سرطانی خلیات کو غذا فراہم کرنے والا راستہ بند کرکے اسے فاقوں مرنے پر مجبور کر دیتے ہیں، اس لئے یہ غذائیں عمررسیدہ افراد کیلئے بے حد فائدہ مند ہیں۔ 


عوامی سروے

سوال: کیا پی ٹی آئی انتخابات سے قبل کیے گئے وعدے پورے کر پائے گی؟