21 اپریل 2019
تازہ ترین
 انتہائی فاصلے پر واقع کہکشاں سے سگنلز موصول

 انتہائی فاصلے پر واقع کہکشاں سے سگنلز موصول

سائنسدانوں کا دعویٰ ہے کہ کینیڈا کی ایک ٹیلی سکوپ پر خلا میں انتہائی فاصلے پر واقع کہکشاں سے بھیجے جانے والے سگنلز موصول ہوئے ہیں۔ یونیورسٹی آف برٹش کولمبیا کے سائنسدانوں کے مطابق ڈیڑھ ارب نوری سال کے فاصلے سے آنے والی ان لہروں کو غیر معمولی رفتار سے بھیجا گیا، ان ریڈیائی لہروں کے بارے میں تفصیل اور ان کے اصل مقام کے بارے میں ابھی کوئی وضاحت نہیں ہے، کچھ سائنسدانوں کا خیال ہے کہ یہ سگنل کسی خلائی مخلوق کے خلائی جہاز سے آئے ہیں۔ ماہرین کے مطابق ان ریڈیو لہروں سے ملنے والے سگنلز ڈیڑھ ارب نوری سال کے فاصلے سے آنے والی ان لہروں کو جس رفتار سے بھیجا گیا تھا وہ بہت غیر معمولی تھا۔ ماضی میں اس نوعیت کا صرف ایک اور واقع رپورٹ کیا گیا  لیکن وہ مختلف ٹیلی سکوپ کے ذریعے آیا تھا۔ یونیورسٹی آف برٹش کولمبیا سے منسلک سائنسدان انگرڈ سٹئیرز نے بتایا کہ  اس پیغام سے یہ لگتا ہے کہ شاید وہاں کوئی اور بھی موجود ہو۔ اور ایسا اگر بار بار ہو اور ہمارے پاس اس قسم کے پیغامات کو جانچنے کے ذرائع ہوں تو ہم شاید یہ گتھی سلجھانے میں کامیاب ہو جائیں کہ یہ کیا ہے اور یہ شروع کیسے ہوئی ۔  کینیڈا کے علاقے برٹش کولمبیا میں واقع  چائم  نامی رصدگاہ میں سو میٹر لمبے چار انٹینا نصب ہیں جو آسمان کا معائنہ کرتے ہیں۔


مزید خبریں

عوامی سروے

سوال: کیا پی ٹی آئی انتخابات سے قبل کیے گئے وعدے پورے کر پائے گی؟