25 ستمبر 2018
افغانستان میں خود کش حملے،16 افراد ہلاک

 افغانستان میں خود کش حملوں اور دھماکوں میں کم از کم 16 افراد ہلاک اور درجنوں زخمی ہوگئے۔ افغان میڈیا کے مطابق جلال آباد شہر میں حکومتی عمارت پر جنگجوؤں نے حملہ کرکے وہاں موجود لوگوں کو یرغمال بنایا تاہم کئی گھنٹوں سے جاری فائرنگ کے تبادلے میں فورسز نے حملہ آوروں کو ہلاک کرکے مغویوں کو بازیاب کرا لیا۔ صوبائی گورنر کے ترجمان عطائ اللہ خوگیانی کا کہنا ہے کہ دو خود کش حملہ آوروں نے بارود سے بھری گاڑیوں کو عمارت کے دروازے سے ٹکرایا اور اسی اثنا میں فائرنگ کرتے ہوئے 3 حملہ آور اندر داخل ہوگئے جنہوں نے وہاں موجود لوگوں کو ایک کمرے میں بند کرکے انہیں یرغمال بنالیا۔ حملے کی اطلاع ملتے ہی فورسز موقع پر پہنچ گئیں اور حملہ آوروں سے فائرنگ کا تبادلہ شروع ہوا جس کا اختتام تینوں حملہ آوروں کی ہلاکت کی صورت میں ہوا تاہم اس واقعے میں پانچ افراد زندگی کی بازی ہار گئے۔ فورسز نے مغویوں کو بازیاب کراتے ہوئے عمارت کا کنٹرول حاصل کرلیا اور واقعے کے 14 زخمیوں کو اسپتال منتقل کر دیا۔ قبل ازیں مغربی صوبے فراح میں سڑک کنارے نصب بم پھٹنے سے مسافر بس میں سوار 11 افراد لقمہ اجل بن گئے۔ حکام کا کہنا ہے کہ ہیرات سے کابل جانے والی بس کو آئی ای ڈی کے ذریعے نشانہ بنایا گیا۔ دھماکے کے بعد بس میں آگ بھڑک اٹھی اور  پوری بس جل گئی، اس واقعے میں 40 افراد زخمی بھی ہوئے جنہیں قریبی اسپتال منتقل کر دیا گیا ہے جہاں بعض کی حالت تشویش ناک بتائی جارہی ہے۔ واضح رہے کہ ان پرتشدد واقعات کی اب تک کسی عسکری تنظیم یا گروہ نے ذمہ داری قبول نہیں کی۔

 


عوامی سروے

سوال: کیا پی ٹی آئی انتخابات سے قبل کیے گئے وعدے پورے کر پائے گی؟