25 مئی 2019
تازہ ترین
 اسلام آباد یونائیٹڈ کی لاہور قلندرز کوشکست

اسلام آباد یونائیٹڈ کی لاہور قلندرز کوشکست

پی ایس ایل کے 27 ویں میچ میں اسلام آباد یونائیٹڈ نے لاہور قلندرز کو 49 رنز سے شکست دے دی۔کراچی کے نیشنل اسٹیڈیم کی بیٹنگ پچ پر کھیلا گیا میچ امیدوں کے مطابق ہائی اسکوررنگ ثابت ہوا، دونوں اننگز کے 40 اوورز میں مجموعی طور پر 427 رنز بنے اور صرف 12 وکٹیں گریں،اسلام آباد یونائیٹڈ نے پی ایس ایل کی تاریخ کا سب سے بڑا 238 کا ٹوٹل بنایا تو جواب میں قلندرز نے 189 رنز بنائے۔ قلندرز کی جانب سے سہیل اختر 75 رنز بنا کر ٹاپ اسکورررہے جب کہ فخرزمان نے 38،ڈیوسوچ نے 18، ویسلز  نے 20 اور حارث سہیل صفر پر آؤٹ ہوئے، وائسے12، آغاسلمان 3، شاہین آفریدی 1، حارث رؤف 7 رنز پر پویلین لوٹے جب کہ لامنچنے 5 اور راحت علی صفر پر ناٹ آؤٹ رہے۔ قبل ازیں قلندرز کے کپتان فخرزمان نے ٹاس جیتا اور فیلڈنگ کو ترجیح دیتے ہوئے اسلام آباد یونائیٹڈ کو بیٹنگ کی دعوت دی۔یونائیٹڈ نے ڈیلپورٹ کی شاندار سنچری  اور آصف علی نصف سنچری کی بدولت پی ایس ایل کی تاریخ کا سب سے بڑا اسکور 238 رنز کا پہاڑ کھڑا کیا۔ یونائیٹڈ کے لیے آغاز اچھا نہ رہا اور پہلی ہی گیند پر رونکی کیچ آؤٹ ہوگئے جب کہ 32 کے مجموعے پر سالٹ 10 رنز بنا کر چلتے بنے ، جس کے بعد والٹن اور ڈیلپورٹ نے 118 رنز کی قیمتی پارٹنرشپ قائم کرکے ٹیم کہ نہ صرف سنبھالا بلکہ بڑے اسکور کی بنیاد بھی رکھی، دونوں بیٹسمینوں نے وکٹ کے چاروں جانب زبردست اسٹروکس کھیلے ۔ والٹن 150 کے مجموعے پر 48 رنز بنا کر پویلین لوٹے، ان کی اننگز میں 4 چھکے اور 2 چوکے شامل جب کہ  دوسری جانب ڈیلپورٹ جم کر بولرز کی پٹائی کرتے رہے اورصرف49 گیندوں پر سنچری بنائی ،انہوں نے 117 رنز کی ناقابل شکست اننگز کھیلی، بائیں ہاتھ کے بلے باز نے 13 چوکے اور 6 چھکے لگائے۔ ہٹر آصف علی نے جارحانہ بیٹنگ کرتے ہوئے 17 گیندوں پر نصف سنچری بنائی  ہے، انہوں نے 21 گیندوں پر 55 رنز بنائے جس میں نصف درجن چھکے اور 3 چوکے شامل تھے۔اسلام آباد یونائیٹڈ نے مقررہ اوورز میں 3وکٹوں پر 238 رنز بنائے جو کہ پی ایس ایل کی تاریخ کا سب سے بڑا اسکور ہے۔ قلندرز کی جانب سے  شاہین آفریدی، لامنچنے اور وائسے نے ایک ایک وکٹ حاصل کی، پہلی ہی گیند پر وکٹ لینے والے شاہین آفریدی سب سے مہنگے بولر ثابت ہوئے جنہوں نے 4 اوورز میں 62 رنز دیے۔  


مزید خبریں

عوامی سروے

سوال: کیا پی ٹی آئی انتخابات سے قبل کیے گئے وعدے پورے کر پائے گی؟