24 ستمبر 2021
تازہ ترین

بزدار حکومت کے تین سال اورشاندار کارکردگی بزدار حکومت کے تین سال اورشاندار کارکردگی

پاکستان تحریک انصاف کے انتخابی منشور کے مطابق پنجاب میں وزیراعلیٰ سردار عثمان بزدار کی زیر قیادت موجودہ حکومت کی تین سال کی کارکردگی رپورٹ جاری کردی گئی ہے، جس میں مختلف شعبہ ہائے زندگی میں صوبائی حکومت کی طرف سے جاری کیے گئے منصوبوں اور وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار کی زیر قیادت عوامی فلاح و بہبود اور صوبائی تعمیر و ترقی کے لئے عوام دوست پروگراموں کے کامیاب نتائج اعدادوشمار کے ساتھ شیئر کیے گئے ہیں اور یہ واضح کیا گیا ہے کہ موجودہ صوبائی حکومت کی کارکردگی ہر اعتبار سے پچھلی حکومتوں کے دور اقتدار کے مقابلے میں بہتر رہی ہے، حکومتی پالیسیوں کے نتیجے میں عوام کو ریلیف حاصل ہوا اور علاقائی ترقی کے مقاصد کے حصول کے لئے لاتعداد ترقیاتی سکیمیں مکمل ہوئی ہیں جب کہ متعدد سکیموں پر ترقیاتی کام تکمیل کے مختلف مراحل میں ہیں، جنہیں جلد از جلد مکمل کیا جارہا ہے، غیر جانبدار مبصرین اور ادارے بھی پنجاب حکومت کی کارکردگی کو تسلی بخش قرار دے رہے ہیں اور ان کے مطابق صوبے میں اصلاحات کا عمل جاری کیا گیا، اس کے بہتر نتائج حاصل ہوئے، اداروں میں بہتری لانے کے لئے جس طرح سے طریقہ کار کو بہتر بنایا گیا، آن لائن سسٹم متعارف کرائے گئے، اداروں کی کارکردگی کی مانیٹرنگ کا نظام وضع کیا گیا، اس کے تحت ترقی اور بہتر سروس کے مطلوبہ اہداف کے حصول میں مدد ملی، خدمات آپ کی دہلیز پر جیسے جدید آئی ٹی ٹیکنالوجی کے حامل منصوبوں کی تکمیل سے عوامی مسائل کے حل میں مدد ملی، ریکارڈ تعداد میں عوامی شکایات کا ازالہ ممکن ہوا، انصاف میڈیسن کارڈ کی فراہمی سے یونیورسل ہیلتھ کیئر پروگرام کے ثمرات سے صوبے کے عوام کو مستفید  کیا گیا اور ہیلتھ کارڈ کی تقسیم کا سلسلہ تیز رفتاری سے مکمل کیے  جانے کے پروگرام پر بھی عمل درآمد تیز تر کیا گیا، اعلیٰ تعلیم کے فروغ کے لئے صوبے میں  21 یونیورسٹیوں کے قیام کے ساتھ 86 ایسوسی ایٹ کالجز اور 8630 سکولوں کی اپ گریڈیشن کی گئی۔ صحت کی سہولتوں میں اضافے کے لئے 9 مدر اینڈ چائلڈ ہسپتال قائم کیے گئے، پوری دنیا کی طرح پاکستان میں کرونا وبا سے درپیش سنگین خطرے کا مقابلہ کرنے کے لئے 2019 میں 24 ارب 50 کروڑ روپے کا خصوصی انسداد کرونا پیکیج جاری کیا گیا، جس کے تحت پنجاب بھر میں کرونا پر قابو پانے کے لئے فنڈز اور سہولتیں فراہم کی گئیں، پنجاب میں زرعی اصلاحات اور زرعی پیداوار میں اضافے کے لئے وزیراعظم کے ذریعے  ایمرجنسی پروگرام کے تحت 300 ارب روپے کا پیکیج جاری کیا گیا، جس سے کاشت کاروں کو زرعی بیج، کھاد، کیڑے مار ادویہ اور قرضوں کے حصول میں مدد ملی، ان اقدامات کے نتیجے میں صوبے میں گندم اور گنے کی پیداوار میں ریکارڈ اضافہ ہوا اور پاکستان کی تاریخ میں پہلی مرتبہ مڈل مین کے کردار کو کم کرکے کاشت کاروں کو ان کی  محنت کا صلہ دیا گیا، تاکہ زیادہ سے زیادہ رقبے پر کاشت کاری ہو اور پنجاب میں زرعی پیداوار میں خاطرخواہ اضافہ ممکن ہو۔ پنجاب میں گڈ گورننس کی مثال یہ ہے کہ پہلی مرتبہ محصولات کو سو فیصد یقینی بنایا گیا، صنعت و تجارت کے فروغ کے لئے ٹیکس فری زون کا قیام ممکن بنایا گیا، جس کے لئے اربوں روپے کا پیکیج جاری کیا گیا، پنجاب میں وسائل اور آبادی میں تناسب قائم رکھنے کے لئے قومی بیانیے  پر موثر عمل درآمد کے لئے وزیراعلیٰ پنجاب کی ہدایت پر محکمۂ بہبود آبادی کے تولیدی صحت پروگرام پر موثر عمل درآمد یقینی بنایا گیا، مقامی ثقافت اور فنون لطیفہ کے لئے متعدد شہروں میں آرٹس کونسل کے قیام اور ثقافتی سرگرمیوں کو فروغ دیا گیا، پنجاب میں صحت و صفائی کے پروگرام پر عمل درآمد کے لئے عیدالاضحیٰ کے موقع پر آلائشیں اور قربانی کے جانوروں کی باقیات کو محفوظ طور پر کھانا کھانے کا انتظام کیا گیا، اس کے علاوہ پنجاب میں عوامی بہبود کے لاتعداد ایسے اقدامات کیے گئے جو براہ راست وزیراعلیٰ پنجاب کے خصوصی پروگرام کے تحت متعارف کرائے گئے، جن پر کامیابی سے عمل درآمد جاری ہے۔ پنجاب حکومت کے 3 سالہ ترقیاتی کاموں کو جس حوالے سے بھی دیکھا جائے ہر شعبہ زندگی میں اصلاحات نمایاں نظر آتی ہیں، جو حکومت پنجاب کی گڈ گورننس اور وزیراعلیٰ پنجاب کے عوام دوست وژن اور عوامی مسائل کے حل میں گہری دلچسپی عوامی خدمات کا منہ بولتا ثبوت ہے۔